Welcome to JCILM GLOBAL

Helpline # +91 6380 350 221 (Give A Missed Call)

مومنوں کے طور پر، یسوع ہماری روحانی نشوونما کا موازنہ انگور کے پودے سے کرتا ہے۔ روحانی پھل پیدا کرنے کے لیے (گل 5:19-23) اور اس مقصد میں چلنے کے لیے جو خُدا آپ کے لیے رکھتا ہے، آپ کو کاٹنا ہوگا۔ جس طرح ایک باغبان پودوں کو پالتا ہے، خُدا آپ کی نشوونما کی نگرانی کر رہا ہے تاکہ آپ مسیح میں بالغ ہو جائیں اور وہ زندگی بسر کریں جس کے لیے اُس نے آپ کو پیدا کیا ہے۔
خدا کے بچوں کے طور پر ہماری شناخت کے لیے کاٹنا بہت ضروری ہے کیونکہ کٹائی ہمیں اطاعت اور استقامت سیکھنے کی صلاحیت فراہم کرتی ہے۔
خُدا ہمیں کیوں کاٹتا ہے؟
– خُدا ہمیں چھانٹتا ہے تاکہ ہم زیادہ پھل پیدا کریں۔ خُدا ہمیں اس لیے نہیں کاٹتا کہ وہ ہم پر ناراض ہے، اور نہ ہی وہ ہمیں کاٹتا ہے کیونکہ یسوع کی قربانی کافی نہیں تھی (سوچ کو ختم کر دیں!) خُدا ہمیں، اپنی شاخوں کو کاٹتا ہے، تاکہ ’’[ہم] زیادہ پھل لا سکیں‘‘ (یوحنا 15:2)۔ دوسرے لفظوں میں، خُدا ہماری مسیحی زندگیوں کو دیکھتا ہے اور یہ نتیجہ اخذ کرتا ہے کہ ہم اتنا پھل نہیں دے رہے جتنا ہم کر سکتے تھے۔ ہم توازن سے باہر ہیں، ہماری شاخیں مردہ ہیں، اور گناہ کے چوسنے والے ہماری روحانی قوت کو ختم کر رہے ہیں۔
– خُدا ہمیں چھانٹتا ہے تاکہ ہم زیادہ محتاج ہو جائیں۔ خُدا ہماری حوصلہ شکنی کے لیے ہمیں نہیں کاٹتا۔ وہ ہمیں تراشتا ہے تاکہ ہم مسیح میں رہنا سیکھیں – زندگی کا حقیقی ذریعہ۔ مسیح میں رہنے کا مطلب ہے فرمانبردار انحصار میں رہنا اس کے جاری، لمحہ بہ لمحہ، فضل کی فراہمی پر—فضل جو خود ہے! اکثر ہم قابل فخر اور خود مختار بن جاتے ہیں، عملی ملحد کے طور پر کام کرتے ہیں۔ یہ کبھی بھی زیادہ ثمر آوری کا باعث نہیں بنے گا۔ “مجھ میں قائم رہو، اور میں تم میں۔ جس طرح شاخ اپنے آپ سے پھل نہیں لا سکتی جب تک کہ وہ انگور کی بیل میں قائم نہ رہے، اسی طرح تم بھی نہیں ہو سکتے جب تک کہ تم مجھ میں قائم نہ رہو (یوحنا 15:4)۔ لہٰذا، خُدا ہم سے اتنا پیار کرتا ہے کہ ہمیں چھانٹ دے تاکہ ہم مسیح میں رہنا، آرام کرنا سیکھیں۔ ہمارا باپ، انگور کا باغبان، ہمیں یہ سیکھنے کی تربیت دیتا ہے کہ عملی طور پر، نہ صرف یہ کہ ہم مسیح کے علاوہ واقعی ’’کچھ نہیں کر سکتے‘‘ (یوحنا 15:5)۔
– خُدا ہمیں چھانٹتا ہے تاکہ وہ ہماری مزید دعاؤں کا جواب دینے کے لیے آزاد ہو۔ الہی کٹائی کا نتیجہ مسیح میں قائم رہنا سیکھنے کی صورت میں نکلتا ہے، جس کے نتیجے میں خدا سے مانگنے کی آزادی ہوتی ہے ”جو تم چاہو، اور وہ تمہارے لیے ہو جائے گا” (جان 15:7)۔ ہماری دعائیہ زندگیوں میں “اطاعت کا تعلق” خُدا کی طرف سے ڈیزائن کیا گیا ہے تاکہ ہمیں ہمارے ایمان کی راہ میں مسلسل ترغیب دے۔ یہ عیسائی زندگی کے رشتوں میں اگر/پھر میں سے ایک ہے۔
– خُدا ہمیں چھانٹتا ہے تاکہ ہم اُس کی تسبیح کریں۔ یسوع بالکل واضح ہے: ’’اسی سے میرے باپ کی تمجید ہوتی ہے کہ تم بہت زیادہ پھل لاؤ‘‘ (جان 15:8)۔ تسبیح کا مطلب بڑا کرنا، بڑا کرنا اور توجہ مبذول کرنا ہے۔ مسیح میں ایماندار ہونے کے ناطے، ہم اپنی طرف توجہ مبذول کرنے کے لیے نہیں رہتے، بلکہ اپنے جلالی خُدا اور نجات دہندہ کی طرف۔ ہمارا مخلصی خُدا کا جلال لاتا ہے تاکہ دنیا جان لے کہ خوشخبری حقیقی ہے۔
– خدا روح القدس کی طاقت کو آزادانہ طور پر بہنے کی اجازت دے کر، روحانی پرورش اور شفا بخشتا ہے، ہمیں احتیاط سے کاٹتا ہے۔
کُلِسّیوں 1:9-10
9 جس دن سے ہم نے ان چیزوں کو سنا ہے ہم تمہا رے لئے مسلسل دعا ئیں کر رہے ہیں۔ ہم یہ دعا کر تے ہیں:
تم کامل طور سے ان چیزوں کو سمجھ جا ؤ گے جو خدا چاہتا ہے۔ تمہا رے علم سے تم عقل اور سمجھنے کی صلاحیت روحانی چیزوں کے متعلق پا ؤگے۔ 10 تا کہ تمہا رے چا ل چلن خدا وند کے لا ئق ہو اور اس کو ہر طرح پسند آئے اور تم میں ہر طرح کے نیک کام کا پھل لگے اور خدا کی پہچان میں بڑھتے جاؤ۔

This post is also available in: English Hindi Tamil Kannada Marathi Malayalam Punjabi Telugu Spanish French

Archives

ہماری زندگیوں میں وہ رشتے ہیں جو ہماری ترقی کو تیز کرتے ہیں اور ہماری زندگیوں میں خدا کے منصوبوں اور مقاصد کو متحرک کرتے ہیں۔ جن چیزوں کو پورا

Continue Reading »

آرام خدا کا دیا ہوا ہتھیار ہے..! روحانی آرام، دماغ میں آرام.. دشمن اس سے نفرت کرتا ہے کیونکہ وہ چاہتا ہے کہ آپ دباؤ میں رہیں۔ شیطان، اس سے

Continue Reading »

تنہائی محسوس کرنے کے لیے ہمیں جسمانی طور پر اکیلے ہونے کی ضرورت نہیں ہے۔ ہم میں سے بہت سے لوگوں نے اپنے تنہا ترین اوقات کا تجربہ کیا ہو

Continue Reading »